الیکشن کمیشن نے حکمران جماعت سمیت 66 سیاسی جماعتوں کو نوٹس جاری کر دیا، 18 نومبر تک یہ کام نہ کیا گیا تو کیا کریں گے؟

سوشل میڈیا‎‎

اسلام آباد(آئی این پی ) پاکستان تحریک انصاف ، پاکستان پیپلز پارٹی اور متحدہ مجلس عمل سمیت 66سیاسی جماعتیں انتخابی اخراجات کی تفصیلات الیکشن کمیشن میں جمع کرانے میں ناکام ہو گئیں جس پر الیکشن کمیشن نے ان سیاسی جماعتوں کو نوٹس جاری کر تے ہوئے کہا ہے کہ اگر یہ تفصیلات 18نومبر تک جمع نہ کروائیں تو الیکشن کمیشن ان سیاسی جماعتوں سے انتخابی نشان واپس لینے کا اختیار رکھتا ہے۔جمعرات کو ترجمان الیکشن کمیشن کے مطابق عام انتخابات میں

کل 120رجسٹرڈ سیاسی جماعتوں میں سے 95سیاسی جماعتوں نے انتخابات میں حصہ لیا تھا ، انتخابات میں حصہ لینے والی تمام سیاسی جماعتیں الیکشن ایکٹ 2017کے تحت کامیاب امیدواروں کے نوٹیفیکیشن کے اجراء کے دو ماہ کے اندر اندر ااپنی انتخابی مہم کے اخراجات اور عطیات ( ایک لاکھ وپے سے زیادہ) دینے والوں کی تفصیلات الیکشن کمیشن میں جمع کراوانے کی پابند تھیں ، جبکہ سیاسی جماعتوں میں سے66سیاسی جماعتیں یہ تفصیلات جمع کروانے میں ناکام رہیں ، جس پر الیکشن کمیشن نے ان سیاسی جماعتوں کو نوٹس جاری کر رہا ہے ، جس میں ان سیاسی جماعتوں کو تنبیہ کی گئی ہے ، اگر انہوں نے اپنی انتخابی مہم کے اخراجات اور عطیات ( ایک لاکھ سے زیادہ) دینے والوں کی تفصیلات 18نومبر تک جمع نہ کروائیں تو الیکشن کمیشن ان سیاسی جماعتوں سے انتخابی نشان واپس لینے کا اختیار رکھتا ہے ۔ الیکشن کمیشن کی طرف سے جن سیاسی جماعتوں کو نوٹس جاری کیا گیا ہے ان میں عام آدمی تحریک پاکستان ، عام عوام پارٹی ، عام لوگ پارٹی پاکستان ، آل پاکستان مسلم لیگ عوامی جسٹس پارٹی ، عوامی نیشل پارٹی ، بلوچستان عوامی پارٹی ، بلوچستان نیشنل پارٹی ، بلوچستان نیشنل پارٹی ( عوامی ) ، ہزارہ ڈیموکریٹک پارٹی ،جماعت اسلامی پاکستان ،جمہوری وطن پارٹی ، جے یو آئی (ف) ، پاکستان عوامی لیگ پاکستان جسٹس اینڈ ڈیموکریٹک پارٹی ، پاکستان مسلم لیگ،پاکستان پیپلز پارٹی ، پاکستان پیپلز پارٹی پارلیمنٹیرینز ،پاکستان راہ حق پارٹی ،پاکستان سنی تحریک ، پاکستان تحریک انصاف ،پاکستان تحریک انصاف گلالئی ، پختونخوا ملی عوامی پارٹی ، سنی اتحاد کونسل ،تحریک لبیک پاکستان ، اور متحدہ مجلس عمل پاکستان سمیت دیگر سیاسی جماعتیں شامل ہیں۔

اس وقت زیادہ پڑھی جانے والی خبریں

اوپر