افغانستان کامستقبل،پاکستان کی اہمیت پھر بڑھ گئی،ٹرمپ نے کیا سوچ کر طالبان سے مذاکرات منسوخ کئے؟دفاعی تجزیہ کاروں کے حیرت انگیز انکشافات

سوشل میڈیا‎‎

واشنگٹن /کابل/اسلام آباد(این این آئی)سیاسی تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ صدر ٹرمپ نے شاید یہ سوچ کر مذاکرات منسوخ کیے ہوں تاکہ وہ طالبان کو مستقل جنگ بندی پر آمادہ کیا جاسکے جس کی وہ ہمیشہ سے مخالفت کرتے رہے ہیں، اور اگر یہ وجہ ہے تو پھر پاکستان کی اہمیت ایک بار پھر بڑھ جاتی ہے کیونکہ ٹرمپ انتظامیہ اب پاکستان سے کہے گی کہ

وہ افغان طالبان کو مستقل جنگ بندی پر آمادہ کرے۔امریکا میں تجزیہ کار اور مبصرین یہ سوال اٹھا رہے ہیں کہ کیا کسی فوجی کا قتل اصل وجہ تھا۔ ان کا کہنا تھا کہ اگر ایسا ہوتا تو امریکا کو صرف اس سال کے بعد ہی طالبان کے ساتھ بات چیت نہیں کرنا چاہیے تھی کیونکہ صرف 16 امریکی امریکی فوجی اہلکار باغیوں کے ہاتھوں ہلاک ہوئے تھے۔ٹرمپ کے آخری لمحے کے فیصلے کے پیچھے ایک ممکنہ وجہ طالبان کو مستقل طور پر جنگ بندی پر راضی کرنا، دفاعی تجزیہ کار لیفٹیننٹ جنرل (ر) امجد شعیب نے متنبہ کیا کہ اگر وہ اس کی شرائط پر طالبان سے معاہدہ کرنے میں ناکام رہا تو امریکا پاکستان کو قربانی کا بکرا بنائے گا۔امریکی فوجیوں کی واپسی سے پاکستان کے لیے واشنگٹن کے ساتھ تعلقات میں بہتری لانے کے مواقع بھی کھلیں گے جب ایسے وقت میں جب اسلام آباد کو کشمیر کے بارے میں بھارت کے ساتھ تناو کو روکنے کے پس منظر کے خلاف اپنی حمایت کی اشد ضرورت ہے۔ سیاسی تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ صدر ٹرمپ نے شاید یہ سوچ کر مذاکرات منسوخ کیے ہوں تاکہ وہ طالبان کو مستقل جنگ بندی پر آمادہ کیا جاسکے جس کی وہ ہمیشہ سے مخالفت کرتے رہے ہیں، اور اگر یہ وجہ ہے تو پھر پاکستان کی اہمیت ایک بار پھر بڑھ جاتی ہے کیونکہ ٹرمپ انتظامیہ اب پاکستان سے کہے گی کہ وہ افغان طالبان کو مستقل جنگ بندی پر آمادہ کرے۔

اس وقت زیادہ پڑھی جانے والی خبریں

اوپر