صنعت اور کمرشل بجلی کے صارفین اور گھریلو صارفین کے لئے علیحدہ علیحدہ اعلان،ریلیف کے نام پر گھریلو صارفین سے دھوکہ، ملک بھر میں حکومت کا دوہرا معیار سامنے آ گیا

سوشل میڈیا‎‎

لاہور(این این آئی) وفاقی حکومت نے کورونا وائرس کی وجہ سے گھریلو صارفین کو ریلیف کے نام پر دھوکہ دے دیا۔ کمرشل و صنعتی صارفین کو تین ماہ کا بل معاف جبکہ گھریلو صارفین کو اقساط کی صورت میں ادائیگی کرنا ہو گی۔تفصیلات کے مطابق وفاقی حکومت کا گھریلو، کمرشل اور صنعتی صارفین کے لئے دوہرا معیار سامنے آ گیا ہے۔ کمرشل و صنعتی صارفین کو تین ماہ کے بل معاف لئے گئے ہیں جبکہ گھریلو صارفین کو ادا کرنا ہوں گے۔

کورونا وائرس سے متاثرہ کمرشل اور صنعتی صارفین کے بجلی کے بل معاف کر دیئے گئے جن مین پانچ کلو واٹ سے لیکر ستر کلو واٹ تک بجلی استعمال کرنے والے صارفین تین ماہ بل ادا نہیں کریں گے۔ذرائع نے بتایا کہ گزشتہ سال کے یونٹس کے مطابق حکومت مئی, جون اور جولائی کے اربوں روپے کے بل ادا کرے گی لیکن کورونا وائرس سے متاثرہ گھریلو صارفین کو بجلی کے بل معاف نہیں کئے گئے۔ گھریلو صارفین کو صرف اقساط کی صورت میں بل ادا کرنے کی سہولت دی گئی ہے۔لیسکو مین تین سو یونٹ تک بجلی استعمال کرنے والوں کو اقساط کی سہولت دی گئی ہے جس کو وزیر اعظم ریلیف کا نام دیا جا رہا ہے۔ قبل ازیں حکومت نے صارفین کے لیے ریلیف پیکج جاری کیا اور بجلی کی تقسیم کار کمپنیوں کو عملدرآمد کی ہدایت بھی کی۔ حکومت نے پانچ کلو واٹ سے لیکر ستر کلو واٹ تک کمرشل و صنعتی صارفین کوریلیف دینے کا فیصلہ کیا تھا۔کمرشل صارفین کے لئے ایک لاکھ تک بل جبکہ صنعتی صارفین کا چار لاکھ پچاسی ہزار روپے تک کا بل بھی حکومت کی جانب سے ادا کرنے کی یقین دہانی کرائی گئی تھی۔ کہا گیا تھا کہ گزشتہ سال کے مطابق استعمال ہونے والے یونٹس پر بل ادا کیے جائیں گے جبکہ رواں سال زائد یونٹ استعمال کرنے والوں کو اضافی بل خود ادا کرنا ہوگا۔

اس وقت زیادہ پڑھی جانے والی خبریں

اس وقت زیادہ پڑھی جانے والی خبریں

اوپر